صفحات

ہفتہ، 30 اگست، 2014

فقہ حنفی میں تیمم کی نیت کرنا اور غیر مقلدین کا دھوکہ

فقہ حنفی میں تیمم کی نیت کرنا اور غیر مقلدین کا دھوکہ
غیر مقلدین نے ہمیشہ کی طرح یہ حوالہ دینے میں بھی خیانت کی اور حوالہ ادھورا نقل کیا۔
مکمل حوالہ اس طرح ہے کہ '' اگر طھارت کی نیت کرے یا نماز مباح ہونے کی نیت کرے تب بھی کافی ہے حدث یا جنابت کے لئے نیت کرنا ضروری نہیں'' لیکن غیر مقلدین نےاپنی عادت سے مجبور ہو کر ہمیشہ کی طرح آدھی عبارت نقل کی اورآدھی عبارت چھوڑ دی۔تفصیل اوپر بیان کی گئی ہے۔

مسئلہ یہی ہے کہ تیمم میں صرف طھارت کی نیت کافی ہے حدث،یا جنابت کے لئے الگ نیت کرنا ضروری نہیں۔اس حوالہ سے پہلے ہدایہ میں تیمم کے مسائل میں واضح لکھا ہے کہ تیمم کےلئے نیت کرنا فرض ہے اور یہ احناف کا مسئلہ ہے اور امام زفرؒ کے نزدیک تیمم میں نیت فرض نہیں۔
احناف نے تو واضح تیمم میں نیت کو فرض کہا۔

غلامِ خاتم النبیینﷺ
محسن اقبال